Latest Press Releases


شیطان ہر وا ر سے ہمیں اللہ کریم سے دور کرنے کی کوشش کرتا ہے


اللہ کریم نے بنی آدم کو تمام مخلوقات پر فضیلت بخشی ہے اور حضرت آدم ؑ کو نوری مخلوق نے سجدہ کر کے اس کی قربت اور نیابت کو تسلیم کیا۔اس احسان عظیم کا شکر ادا کرنا اور اپنی حدود میں رہ کر اپنے فرائض کی بجا آوری لانا ہے اور ایسے امور کو زیر بحث نہ لایا جائے جن سے متعلق روز محشر پوچھا نہ جائے گا۔
 امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستا ن کا جمعتہ المبارک کے موقع پر خطاب 
  انہوں نے مزید کہا کہ کسی دوسرے کے متعلق ہماری ابتداء منفی سوچ کے تحت ہو تی ہے۔جو کہ من حیث القوم درست نہ ہے ہمیں دوسروں کے لیے اچھائی کا گمان رکھنا چاہیے۔ایک بات یاد رکھنے کی ہے کہ انسان بشر ہے اور اس میں خطا کرنے کا عنصر ہمہ وقت موجود ہے  اللہ کریم اس بات کو پسند فرماتے ہیں کہ یہ مخلوق غلطی کرے اور پھر اس پر نادم ہو کر معافی کی طلب گار ہو اور ایک جگہ ارشاد ہے کہ اگر یہ مخلوق غلطیاں چھوڑ دے تو اللہ کریم اس کی جگہ ایسی مخلوق پیدا فرمائیں گے جو غلطی کرے اور پھر اپنے اللہ کریم سے اس کی معافی بھی طلب کرے کیونکہ اللہ کریم کو معاف کرنا محبوب ہے آپ بہت رحم کرنے والے ہیں۔
  یاد رہے کہ 10 اکتوبر بروز اتوار دارالعرفان منارہ  میں سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ کے زیر اہتمام ماہ مبارک ربیع الاول کی مناسبت سے جلسہ بعثت رحمت عالم ﷺ کے موضوع پر بہت بڑے جلسہ کا انعقاد کیا جارہا ہے جس میں حضرت امیر عبدالقدیر اعوان مد ظلہ العالی خصوصی خطاب  فرمائیں گے اور اجتماعی دعا بھی ہو گی خواتین و حضرات کے لیے دعوت عام ہے اس بابرکت پروگرام میں شرکت فرما کر اپنے قلوب کو منور فرمائیں۔
  آخر میں انہوں نے ملکی سلامتی اور بقا کی اجتماعی دعا فرمائی۔

shetan har wa ray se hamein Allah kareem se door karne ki koshish karta hai - 1

بندہ تکبر اور خراب نیت کی وجہ سے صحیح راستہ اختیار نہیں کر سکتا


ہم اپنا عمل چھوڑ کر ساری بحث دوسروں پر کر رہے ہوتے ہیں۔جب کوئی تکبر میں آکر بحث کرتا ہے تو وہ نہیں چاہتا کہ کوئی میری بات کو رد کرے۔ابلیس کے انکار کا سبب بھی تکبر ہی تھا کہ میرے جیسا کوئی نہیں اللہ کریم کی ذات تو علیم ہے وہ جانتے ہیں کہ کس نے کب کیا کرنا ہے اسی لیے اللہ کریم فرماتے ہیں کہ وہ تھا ہی کافروں میں سے۔ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم خود کو دیکھیں کہ اپنے روز مرہ کے معاملات میں اللہ اور اللہ کے رسول ﷺ کا اتباع کر رہے ہیں یا اپنی پسند کو ترجیح دے رہے ہیں۔ابلیس اللہ کریم کو مانتا تھا لیکن اللہ کریم کی نا مانی تو پھر ماننا کیسا؟
 امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان کا جمعتہ المبارک کے موقع پر خطاب
  انہوں نے کہا کہ سب سے بڑی ذات اللہ کریم کی ہے پھر مخلوق تکبر کا کیسے سوچ سکتی ہے۔اپنے شب و روز کو اللہ کی یاد سے روشن کریں، اللہ کریم کی رضا کے ساتھ جب اس کا قرب نصیب ہوگا تو لمحہ لمحہ قیمتی ہوتا چلا جائے گا۔جتنی سمجھ نصیب ہوگی اتنی تڑپ نصیب ہوتی چلی جائے گی۔ جن و انس دو مکلف مخلوق ہیں جنات کو اس دنیا میں انسان سے پہلے پیدا فرمایا گیا جنات کی عمریں بہت زیادہ ہوتی ہیں۔جب حساب کتاب کی بات آئے گی تو جنات کا حساب تو ہو گا لیکن جنت میں جانے کا ان کا کوئی واضح ذکر نہیں ملتا۔لیکن انسان کی حیات کا خاصہ کیونکہ اسکی روح ہے جو عالم امر سے ہے اور عالم امر کو فنا نہیں اس لیے انسان کو بھی فنا نہیں ہے یہ ہمیشہ رہے گا جنت میں ہو یا جہنم میں لیکن ہمیشہ کے لیے رہے گا۔جبکہ جنات کو یہ حصہ نصیب نہیں ہوا۔ابلیس بھی جنات میں سے ہے۔جنات کی دو قسمیں ہیں ایک وہ جو عمومی ہیں اور دوسرے جو ابلیس کی اولاد ہیں شیاطین میں سے، تکبر کیا اور ددکارا گیا مردود ٹھہرا۔تکبر ایسی حالت ہے اسے جتنا بھی چھپا لو کہیں نہ کہیں ظاہر ہو جاتی ہے چاہے کوئی دین کا کام بھی کر رہا ہو اگر اس میں تکبر موجود ہے تو وہ سمجھا رہا ہوگا کہ سب سے بڑی ذات اللہ کریم کی ہے لیکن ساتھ یہ بھی سوچ ہوگی کہ جو بات میں کہہ رہا ہوں یہ بات سب سے بہتر ہے اس کے مقابل کوئی بات نہ کرے۔اس کا علاج صرف اور صرف یاد الٰہی ہے یاد الٰہی سے ہمارے قلوب اس قابل ہوتے ہیں کہ ان میں انا،ضد اور تکبر ختم ہوتا جاتا ہے اور بندہ کو اللہ کریم کی عظمت کا ادراک ہوتا چلا جاتا ہے۔ اللہ کریم ہمیں صحیح شعور عطا فرمائیں۔
  آخر میں انہوں نے ملکی سلامتی اور بقا کی اجتماعی دعا فرمائی۔
Bandah taqqabur aur kharab niyat ki wajah se sahih rasta ikhtiyar nahi kar sakta - 1

نوری مخلوق ہر لمحہ دست بستہ ہے اور انسان کو دونوں راستے بتا کر اختیار دے دیا


 حضرت انسان کو وہ علوم اور حکمت عطا کی جو کسی اور مخلوق کو عطا نہیں کی گئی۔اللہ کریم نے حضرت آدم ؑکو اپنی نیابت سے نوازا۔اور راہ ہدایت اور انکار کا اختیار بھی دیا اور پھر اللہ کریم کی چاہت کے مطابق زندگی کا گزارناپھر خصوصی حیات امر ربی سے عطا کی، اللہ کی معیت کی تڑپ  کسی شئے کے ظاہر سے لے کر اس کے خواص تک کا علم اس انسان کو عطا کیا۔
 امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان کا جمعتہ المبارک کے موقع پر خطاب!
 انہوں نے کہا کہ علم کے دوحصے ہیں ایک حصہ ہر مخلوق کو تخلیقی طور پر اللہ کریم کی طرف سے عطا ہوتا ہے جیسے پیدائش کے فوراً بعد اپنی خوراک کا حصول،مچھلی کے بچے کا پیدا ہوتے ہی پانی میں تیرنا۔اور دوسرا علم کسبی جس کے لیے اسے کسب اختیار کرنا پڑتا ہے،تربیت لینی پڑتی ہے کسی سے سیکھنا پڑتا ہے محنت کرنا پڑتی ہے مجاہدہ کرنا پڑتا ہے۔پھر وہ علم حاصل ہوتا ہے۔مزید علم پر روشنی ڈالتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حدیث مبارکہ ہے کہ علم کے دوحصے ہیں ایک علم الادیان اور دوسرا علم الابدان۔عقائدہ اور شریعت کا علم،علم الادیان کہلاتا ہے۔اور دوسرا حصہ علم الابدان یعنی فزیکل سائنسز کا علم یعنی روزمرہ کی ضروریات کی تکمیل کا علم یہ علم کا دوسرا درجہ ہے۔اور آپ ﷺ کا فرمان ہے کہ علم حاصل کرو چاہے اس کے لیے تمہیں چین جانا پڑے۔یہاں سے علم کے حصول کی اہمیت کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔کہ دین کے ساتھ دنیاوی علم حاصل کرنا بھی کتنا بھی ضروری ہے اور دین اسلام علوم کے حصول کی کتنی اہمیت بیان فرماتا ہے۔
  انہوں نے مزید کہا کہ کہ حضرت آدم ؑ کو براہ راست علوم عطا فرمائے گئے اور بغیر وسیلے کے عطا ہوئے اسے علم لدنی کہتے ہیں۔ایک بات قابل غور ہے کہ فرشتوں کو بھی جو علم عطا ہوا اس بشر کے وسیلے سے عطا ہوا۔اور اسے استاد کا درجہ دیا۔نبی کریم ﷺ کو نبی اُمی کہا جاتا ہے اس کا مطلب یہ ہے کہ آپ کو جتنے بھی علوم عطا ہوئے وہ اللہ کریم سے ہی عطا ہوئے آپ ﷺ نے اس دنیا کے کسی انسان سے  علم حاصل نہیں کیا۔مخلوق میں کسی کا مقام نہیں کہ وہ آپ ﷺ کو علم سکھا سکے۔امام الانبیاء آپ ﷺ کا مقام ہے یہ آپ ﷺ کی شان ہے یہ بلندیا ں اللہ کریم نے آپ ﷺ کو ہی عطا فرمائی ہیں۔
  انہوں نے مزید کہا کہ اقوام کی ترقی و تنزلی کا سفر اب بھی جاری ہے۔ابھی بھی تمام ایجادات کے باوجود یہ بات تسلیم کی جا رہی ہے کہ ابھی تک انسان کے دماغ کا صرف دس فیصد استعمال ہوا ہے جب بات جاننے کی آئے گی تو اللہ کریم خالق ہیں انہوں نے جتنا کسی کے لیے علم پسند فرمایا اتنا اسے عطا فرما دیا۔اس سارے کا حاصل یہ ہے کہ میں بحیثیت انسان کہاں کھڑا ہوں۔اور ہر عمل کے ساتھ میرا ارادہ میری نیت جو کہ میرے نہاں خانہ دل میں ہے وہ مالک وہ خالق اسے بھی جانتا ہے۔نیت دل کا فعل ہے اور اس کی اصلاح کیفیات باطنی سے ہوگی جو دین کی بنیاد ہے۔اللہ کریم دین کی روح کو سمجھنے کی توفیق عطا فرمائیں 
  آخر میں انہوں نے ملکی سلامتی اور بقا کی اجتماعی دعا فرمائی
Noori makhlooq har lamha dast basta hai aur insaan ko dono rastay bta kar ikhtiyar day diya - 1

شہید اپنی زندگی اللہ کی راہ میں قربان کر کے ہمیشہ کے لیے امر ہو جاتا ہے


علم غیب سوائے اللہ کے کوئی نہیں جانتا۔مخلوق میں سے اللہ کریم جسے جتنا علم عطا فرما دیں اتنا ہی وہ جان سکتا ہے۔انسان کو اللہ کریم نے زمین پر اپنا نائب مقرر فرمایا ہے اور خلیفہ کی خلافت کی حقیقت یہ ہوتی ہے کہ وہ اس دائرہ میں رہتے ہوئے ہی اپنے امور کی انجام دہی کر سکتا ہے جو اُسے تفویض کیا گیا ہو۔ نائب بھی اپنا عمل تب اختیار کر سکتا ہے جب اُسے اس کا علم ہو کہ اس نے کون سا کام کیسے کرنا ہے۔اور یہاں یہ بات انتہائی اہم ہے کہ اللہ کریم نے انسان کو مکلف مخلوق بنایا کہ وہ صحیح اور غلط کا فیصلہ کر سکے۔اس وقت اللہ کریم نے ہمیں فرصت دی ہے کہ ہم اپنے نفس کی ماننے کی بجائے اللہ اور اللہ کے حبیب ﷺ کے بتائے ہوئے اصولوں پر زندگی بسر کریں۔
 امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان کا دوروزہ ماہانہ روحانی اجتماع کے موقع پر سالکین بہت بڑی تعداد سے خطاب!
  انہوں نے یوم دفاع پر شہداء پاکستان کو سلام پیش کرتے ہوئے کہا کہ شہید اپنی زندگی اللہ کی راہ پر قربان کر کے ہمیشہ کے لیے امر ہو جاتا ہے جب اُسے انعامات سے نوازا جائے گا تو پوچھا جائے گا اور کیا چاہتے ہو تو عرض کرے گا کہ مجھے دنیا میں پھر سے بھیجا جائے اور میں پھر تیری راہ میں لڑوں اور اپنی جان تیرے راستے پر نچھاور کر دوں وہ لذت جو اس وقت نصیب ہوئی تھی وہ اس جنت میں بھی نہیں ہے۔
  انہوں نے مزید بات کرتے ہوئے کہا کہ کسی شئے کا عین اپنے مقام پر ہونا اللہ واحدانیت کی طرف سے وہی اس کا مقام ہے اس پر اعتراض اللہ کریم پر اعتراض ہو گا،ہر پہلو میں اپنے اللہ کریم کی طرف دیکھیں،اسباب ضرور اختیار کریں لیکن حتمی نتائج کے لیے اپنی نگا ہ ذات باری تعالی کی طرف ہی رکھیں۔یہ جو ہم صبح شام اللہ اللہ کی ضربیں اپنے قلوب پر لگا رہے ہیں خود کو دیکھیں کہ کیا میں اپنی پسند کو ترجیح دے رہا ہوں یا اپنی پسند اللہ کریم کی پسند میں ڈھل رہی ہے اپنی چاہتیں دیکھیں کس طرف ہیں اللہ اللہ کی تکرار سے بندہ مومن کو حکمت نصیب ہوتی ہے۔
  آخر میں انہوں نے ملکی سلامتی اور بقا کی اجتماعی دعا فرمائی۔
Shaheed apni zindagi Allah ki raah mein qurbaan kar ke hamesha ke liye amar ho jata hai - 1

حق سے انکار کی بنیادی وجہ تکبر، انا اور ذاتی ضد ہے


جس طرح ہم دنیا کے کاموں کی تکمیل کے لیے اسباب اختیار کرتے ہیں اسی طرح دین کو سمجھنے اور سیکھنے کے لیے بھی اسباب اختیار کرنے چاہیے۔دین کی اہمیت ہمارے نزدیک کم ہے اور دنیا کی اہمیت زیادہ ہے اسی لیے ہمارے اعمال بھی ایسے ہیں۔دین کو ہم مولانا اور پیر صاحب کے سپرد کر دیتے ہیں یہ درست نہیں ہے۔تخلیقی انداز کے مطابق چلنا تقویت کا سبب ہے اور فطرتی انداز کے مخالف چلنا تکلیف کا سبب ہوگا۔امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ وسربراہ تنظیم الاخوان پاکستان کا جمعتہ المبارک کے موقع پر خطاب 
  انہوں نے کہا کہ حق سے انکار کی بنیادی وجہ تکبر، انا اور ذاتی ضد ہے۔اللہ کریم کی بہت عطا ہے کہ جگہ جگہ اُس کی قدرت کی نشانیاں موجود ہیں ہم استفاد ہ حاصل نہیں کر پا رہے۔اعتراض کرنے والا بھی اس بات کو ماتنا ہے کہ کوئی طاقت ایسی ہے جو اس کارگاہ حیات کو چلا رہی ہے۔کتنی ہی نشانیاں اللہ کریم کی واحدانیت کے حوالے سے موجود ہیں۔دین کا جاننا ہمارے نزدیک اہم ہو بندگی کی کیفیت اور حال سے ہم آشنا ہوں تو یہ عمل مقدم رہے گا اور اگر ایسا نہ ہو تو پھر صرف دنیا ہی رہ جاتی ہے۔اور بندہ اسی کے پیچھے ساری زندگی بھاگتا رہتا ہے۔
انہوں نے سید علی شاہ گیلانی مرحوم کی وفات پر تعزیت کرتے ہوئے کہا کہ بانی ئ تحریک حریت سید علی شاہ گیلانی  ؒ آزادی کشمیر کے علمبردارتھے اُن کی ساری زندگی جُہدِ مسلسل کی مثال ہے۔اللہ کریم انہیں جنت الفردوس میں اعلٰی مقام عطا فرمائیں۔ہم اُن کی وفات کے دکھ میں اپنے کشمیری بھائیوں کے ساتھ برابر کے شریک   ہیںاور دعا گو ہیں کہ اللہ کریم سید علی شاہ گیلانی  ؒ سمیت تمام کشمیری بھائیوں اور ہمارے خواب آزادیئ کشمیر کو شرمندہئ تعبیر فرمائیں۔(امین)
  یاد رہے کہ دارالعرفان منارہ میں دو روزہ ماہانہ روحانیا جتماع بروز ہفتہ اتوار کا انعقاد ہو رہا ہے جس میں ملک بھر سے سالکین اپنی روحانی تربیت کے لیے تشریف لاتے ہیں بروز اتوار حضرت جی مد ظلہ العالیدن گیارہ بجے خصوصی خطاب فرمائیں گے اور اجتماعی دعا بھی ہوگی شرکت فرما کر اپنے دلوں کو برکات نبوت ﷺ سے منور کیجیے۔
  آخر میں انہوں نے ملکی سلامتی اور بقا کی اجتماعی دعا فرمائی۔
Haq se inkaar ki bunyadi wajah taqqabur, anaa aur zaati zid hai - 1

ہمیں اپنے کرداراور گفتار میں سچ کے ساتھ معاشرے میں تبلیغ کرنی ہوگی


سب سے پہلے بحیثیت مسلمان اس کے بعد بحیثیت قوم اپنے اس وطن عزیزکی تعمیر و ترقی میں اپنے کردار کو دیکھنا ہوگا۔انھوں نے سالکین سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ یاد رکھیں کہ سب سے بڑی تبلیغ ہمارے نزدیک ایام نہیں ہیں، ماہ و سال نہیں ہیں۔جس راہ پر انسان چلتا ہے وہ راستہ سفر کرنے والے کی شہادت دیتا ہے۔جب بات معاملات کی آئے گا تو شرف قبولیت میں معاملات کا کلیدی کردار ہے۔ان خیالات کا اظہار شَیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان حضرت امیر عبدالقدیر اعوان نے اویسیہ سوسائٹی ٹاؤن شپ لاہور کی جامع مسجد میں جمعہ کا خطاب فرماتے ہوئے کیا۔ انھوں نے کہا کہ سب سے بڑی جو تبلغ ہے وہ ہمارا کردار ہے۔آپ ساری زندگی تبلیغ پر صرف کردیں لیکن آپ کے کردار میں جو جھوٹ ہو گا اس سے معاشرے میں خرابی پیدا ہوگی۔آپ کہیں ایک قدم نہ اٹھائیں مگر آپ کے کلام میں سچ ہو تو وہ سچ جھوٹ پر غالب آجائے گا۔ہمیں اپنے کرداراور گفتار میں سچ کے ساتھ معاشرے میں تبلیغ کرنی ہوگی۔ہماری گفتار حق اور سچ ہو،ہمارا کردار صالح ہو۔ لطائف پر محنت کریں مراقبات پر محنت کریں ساری زندگی اس پر محنت کریں حضرت امیر محمد اکرم اعوانؒ نے ساری زندگی اس پر محنت کی۔ 
انھوں نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم دنیا کے مقام کو دیکھتے ہیں کہ میرا مقام کس جگہ تھااپنی انا کو وہاں رکھیں جہاں آخرت کی بات ہے۔دنیا کو چھوڑنے کی ضرورت نہیں ہے۔ دنیا اور زندگی کی مثال کشتی اور پانی کی ہے کشتی جب تک تیرتی ہے کنارے پر پہنچ جاتی ہے مگرجیسے ہی اس میں پانی آجاتاہے تو کشتی ہچکولے کھانا شروع ہوجاتی اور اس کا پانی کے اوپر تیرنا مشکل ہوجا تا ہے۔ اسلام ایثار کا درس دیتا ہے،اسی جہان فانی میں زندگی بسر کرو گے تو کسی کا حق ادا ہو گا،کسی کی مدد ہوگی، تارک دنیا ہونا مشائخ عظام نے نہیں سکھایا۔ہمیں دنیا میں ویسے رہنا ہے جہاں ایک ایک عمل اتباع رسالت ﷺ میں گزرے جب وقت آخرت ہو تو زبان ذکر الٰہی سے تر ہو۔
1978ء میں اویسیہ سوسائٹی لاہور حضرت مولانا اللہ یار خان ؒ کے زیر سایہ معرض وجود میں آئی۔گیارہ ستمبر1987ء میں حضرت مولانا امیر محمد اکرم اعوانؒ نے اویسیہ سوسائٹی کا سنگ ِ بنیاد رکھا۔1987ء میں قرعہ اندازی کے ذریعے سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ کے بیعت شدہ ساتھیوں کو پلاٹ الاٹ کیے گئے اور اسی دن صقارہ کالج کے لیے 12کنال اراضی الاٹ ہوئی۔ حضرت امیر محمد اکرم اعوان ؒ کے زیرسایہ 1990ء میں صقارہ کالج کی تعمیر مکمل ہوئی۔حضرت امیر محمد اکرم اعوان ؒ کا نظریہ تھا کہ ہم ایک ایسا تعلیمی نظام رائج کریں جس میں بچے جدید طرزپر تعلیم حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ دین کا بھی مکمل علم حاصل کریں ان کے نظریے کے مطابق ہمارے تعلیمی نظام میں یہ دونوں علوم یکجا ہونے چاہئیں تاکہ ہمارے بچے جب تعلیم سے فارغ ہو ں تو وہ انجیئیرز،ڈاکٹرز،سائنسدان اور بزنس میں ہونے کے ساتھ ساتھ دین اسلام کا بھی مکمل علم رکھتے ہوں۔اس نظریے کے ساتھ ہمارا کردار قرآن وسنت میں ڈھل جاتا ہے۔اس کے ساتھ ساتھ اویسیہ سوسائٹی میں علاقے کی فلاح و بہبود کے لیے مولانا اللہ یار ؒ خان ٹرسٹ قائم کیا جہاں آج بھی ہر مہینے کی آخری اتوار کو فری میڈیکل  کیمپ لگتا ہے جس سے ہزاروں لوگوں کا فری چیک اپ ہونے کے ساتھ فری ادویات بھی فراہم کی جاتی ہیں۔ 
سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و تنظیم الاخوان لاہور ڈویژن کے تمام اضلاع سے نمائندگان نے بھرپور شرکت کی۔شرکت کرنے والوں میں مرکزی سیکرٹری نشرواشاعت امجد محمود اعوان، مخدوم الطاف احمد صاحب مجاز سلسلہ عالیہ لاہور، تاج محمود چشتی صدر تنظیم الاخوان لاہورڈویژن، عامر ندیم جنرل سیکرٹری لاہور ڈویژن، محمد اکرم سیکرٹری نشرواشاعت لاہور، راشد عبدالقیوم صدر تنظیم الاخوان لاہور،عبدالرحمن جج جنرل سیکرٹری لاہور، عبدالمالک منصوری سیکرٹری نشرواشاعت لاہورکے علاوہ علاقے کی سماجی و سیاسی شخصیات نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔
Hamein apne Kirdar aur guftaar mein sach ke sath muashray mein tableegh karni hogi - 1

حسینیت اور یزیدیت دو راستے متعین ہوگئے اب ہمارا انتخاب ہے کہ کونسا راستہ اختیار کرنا ہے


 حسینیت اور یزیدیت  دو  راستے متعین ہوگئے  اب ہمارا انتخاب ہے کہ کونسا راستہ اختیار کرنا ہے۔  آج ہمارے سامنے دو  راستے ہیں  ایک حسینیت کا اور دوسرا یزیدیت کا، اس وقت معاشرے میں ہر لمحہ کربلا برپا ہے ہر لمحے ہمارا امتحان ہے کہ ہم حضرت حسین ؓ  کی زندگی مبارک کو سامنے رکھتے ہوئے اپنی راہ کا تعین کریں اور اللہ کی راہ میں کسی قسم کی قربانی سے دریغ نہ کریں اپنی پسند سے لے کر اپنی جان قربان کرنے تک ہر بات میں ہر کام میں اللہ اور اللہ کے نبی ﷺ کی پسند کو مقدم جانیں۔اورمعاشرے میں کسی قسم کے فسادکا حصہ نہ بنیں۔
 امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان کا جمعتہ المبارک کے موقع پر خطاب!
  انہوں نے کہا کہ ہر سینے میں کربلا کی کیفیت موجود ہے۔حضرت حسین ؓ کی قربانی محض اس لیے تھی کہ یزید نے امارت کے لیے اپنی ذاتی پسند کو ترجیح دی اور اُس کا یہ فیصلہ اللہ کریم کی مرضی کے خلاف تھا۔جس پر حضرت حسین ؓ نے بیعت نہ کی اور خاندان نبوت ﷺ قربان کر دیا۔وہ ریت مقدس خون سے سیراب ہوئی۔  آج ہمیں اپنی زندگیوں کاجائزہ لینا چاہیے کہ ہمارے دعوی محبت میں اور ہمارے عمل میں کتنا فاصلہ ہے ہمیں چاہیے کہ ہم اپنی زندگیوں کا رخ اُس راہ کی طرف موڑیں جو راہ حضرت حسین ؓ نے اختیار کی،کربلا کے عظیم سانحہ سے ہمیں یہی سبق ملتا ہے کہ ہمیشہ حق پر رہیں چاہے اس کے لیے ہمیں کوئی بھی قربانی دینی پڑے۔
  انہوں نے مزید سالکین سے شعبہ تصوف کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ جو بھی معمول اختیار کرنے کو کہا جائے  وہ روزانہ کی بنیاد پر کریں اور ویسے ہی کریں جیسے کہا جائے اس میں کمی بیشی نہ کی جائے وہی عمل نتائج دے گا جو روزانہ کی بنیاد پر کیا جائے چاہے چھوٹا عمل ہی کیوں نہ ہو۔اگر کسی معمول کی روزانہ ایک تسبیح کر سکتے ہیں تو پھر ایک ہی کریں لیکن روزانہ کریں۔
  آخر میں انہوں نے ملکی سلامتی او ربقا کی اجتماعی دعا فرمائی۔
Hussainiyat aur yazeediat do rastay mutayyan hogaye ab hamara intikhab hai ke konsa rasta ikhtiyar karna hai - 1

اتباع محمد الرسول اللہ ﷺ کو اختیار کر کے خانوادہ رسول ﷺ کی سنت کو تازہ کرنا چاہیے


محرم الحرام کے ماہ مقدسہ میں ہمیں اپنی عقیدت،اپنا درد دل اور محبت کے اظہار کورواجات کی نذر کرنے کی بجائے اتباع محمد الرسول اللہ ﷺ کو اختیار کر کے خانوادہ رسول ﷺ کی سنت کو تازہ کرنا چاہیے۔  محرم الحرام کے ان ایام میں ہم خانوادہ رسول ﷺ حضرت حسین ؓ کی اُس قربانی کو یاد کرتے ہوئے اعمال اختیار کریں کہ جنہوں نے اپنے سمیت اپنا سارا خاندان تہہ تیغ کرا دیا لیکن دین محمد ی ﷺ پر آنچ نہ آنے دی۔آج ہمیں بھی رواجات سے نکل کر اسوہ حسنہ پر عمل پیرا ہونے کی ضرورت ہے اور اپنے دل کے درد اور محبت کا اظہار انہی حدود و قیود میں رہ کر کرنا ہو گا جو اللہ کریم نے مقرر فرما دی ہیں۔
 امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان کا جمعتہ المبارک کے موقع پر خطاب 
  انہوں نے کہا کہ ایمان کے ساتھ نبی کریم ﷺ کا اتباع کرتے ہوئے زندگی گزارنے کے انعامات جنت میں بے شمار نعمتوں کی صورت میں ملیں گے۔اور آج یہاں اس دار دنیا میں جنت کی نعمتوں کی مثال بھی نہیں دی جا سکتی۔اس دنیا میں جب ہم کسی چیز کو دیکھتے ہیں تو اس کے عمومی اور خصوصی دونوں پہلو دیکھتے ہیں جب جنت کے انعامات کی بات آئے گی وہاں صرف خصوصی پہلو ہی ہو گا عمومی نہیں۔  کہ صاحب جنت جس کا درجہ آخری ہو گا سب سے کم ہو گا اس کے محلات بھی اس دنیا سے وسیع ہونگے۔
  یاد رہے کہ 14 اگست 2021 بروز ہفتہ چکوال پریس کلب میں یوم آزادی سیمینار کا انعقاد کیا گیا ہے جس میں چکوال پریس کلب کی طرف سے حضرت امیر عبدالقدیر اعوان مد ظلہ العالی کو بحیثیت صدر محفل مدعو کیا گیا ہے اور پرچم کشائی کے بعد آپ کا خصوصی بیان بھی ہو گا بعد میں ملک و قوم کی بقا اور سلامتی کے لیے اجتماعی دعا ہو گی۔
Itebaa Mohammad-ur-Rsool Allah SAW ko ikhtiyar kar ke khanwad-e-Rasool SAW ki sunnat ko taaza karna chahiye - 1

دل کی اصلاح بندہ مومن کی نیت کو سیدھا کر دیتی ہے۔


 اسلامی سال کا آغاز (یکم محرم الحرام)حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کی شہادت سے ہوتا ہے۔جن کے بارے آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ میرے بعد اگر کوئی نبی ہوتا تو وہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ ہوتے۔ اسلام کی اس عمارت کی تعمیر میں صحابہ کرام کی ہڈیاں،گوشت اور خون لگا ہے۔آج ہمیں اعتراضات میں پڑنے کی بجائے اسلام کی اس عمارت کی حفاظت کرنی چاہیے۔
 امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان کادارالعرفان منارہ میں  دو روزہ ماہانہ روحانی اجتماع  کے موقع پر سالکین کی بہت بڑی تعداد سے خطاب!
  انہوں نے کہا کہ اللہ اور اللہ کے رسول ﷺ کے حکم کے تابع رہتے ہوئے زندگی بسر کریں۔اگر ہم مومن ہونے کا دعوی رکھتے ہیں تو اس کا ثبوت ہمارا کردار ہو گا ہم دن بھر کتنا سچ بولتے ہیں،ہمارا لین دین کتنا کھرا ہے،آج ہمارے اندر برائی عا م ہو چکی ہے اور اس برائی پر من حیث القوم کوئی آواز نہیں اُٹھا رہا بلکہ اعتراضات بھی اگر کیے جا رہے ہیں تو وہ بھی دین اسلا م پر!  اللہ کریم نے ہمیں اس اجتماع میں اپنے نام پر جمع فرمایا ہے اللہ کریم ہمارے اندر وہ درد پیدا کریں جس سے ہمارے قلوب کی اصلاح ہو۔یاد رکھیں قلوب کی اصلاح بندہ مومن کی نیت کو سیدھا کر دیتی ہے۔
  آخر میں انہوں نے کورونا سے حفاظت اور ملک و قوم کی سلامتی اور بقا کی اجتماعی دعا فرمائی۔  یاد رکھیں کہ 14 اگست کو امیر عبدالقدیر اعوان چکوال پریس کلب میں یوم آزادی کے موقع پر پرچم کشائی بھی ہوگی  اور خصوصی خطاب بھی فرمائیں گے
Dil ki islaah bandah momin ki niyat ko seedha kar deti hai . - 1

ہر برائی کائنات میں ظلمت کا سبب بنتی ہے


قرآن کریم کے مفاہیم اور الفاظ کے نتائج بھی وہی ہیں جو آپ ﷺ نے ہمیں بتا دئیے۔آج اگر کوئی قرآن کریم کی آیات سے اپنی پسند کا ترجمہ کر کے لوگوں کو بتاتا ہے تو یہ وہ مذموم کوشش ہے جو حق کو بیچنے کے مترادف ہے۔یاد رکھیں حق کا راستہ ایک ہی ہے جو آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا۔
 امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان کا جمعتہ المبارک کے موقع پر خطاب 
  انہوں نے کہا کہ اللہ کریم نے زمین کو بچھونا اور آسمان کو چھت بنا دیا ہے اور یہ سب اللہ کریم نے حضرت انسان کے لیے بنایا ہے۔پھر آسمان سے پانی برسایا جس کے ہر قطرے میں حیات سمو دی ہے جس سے کئی قسم کی اجناس،پھل اور پھول پیدا فرمائے یہ سب کچھ بارش کے برسنے کے نتیجے سے ہوا۔اسی طرح ہر شئے کا کوئی نہ کوئی نتیجہ ہوتا ہے عمل بد یا حد سے باہر کوئی قدم اُٹھتا ہے تو یہ عمل کائنات میں ظلمت کا سبب بنتا ہے۔
  انہوں نے مزید کہا کہ اس کار گاہ حیات میں جب کسی پر کوئی مصیبت آتی ہے تو اللہ کریم سے مدد طلب کرتا ہے اور جب اللہ کریم اس سے یہ مصیبت ہٹا دیتے ہیں راحت عطا فرماتے ہیں تو بندہ بھول جاتا ہے کہ اس مصیبت کو ہٹانے والے میرے پرور دگار ہیں۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ ظاہر کے ساتھ ساتھ باطنی اصلاح بھی ضروری ہے۔کیونکہ ماننے کے ساتھ ضروری ہے کہ قلب بھی اس بات کی تصدیق کرے جو زبان سے ادا ہو رہا ہے۔
  یاد رہے کہ دارالعرفان منارہ میں 7,6 اگست بروز ہفتہ اتوار دو روزہ ماہانہ روحانی اجتماع کا انعقادہو رہا ہے جس میں ملک بھر سے سالکین اپنی روحانی تربیت کے لیے تشریف لاتے ہیں اور اپنے قلوب کو برکات نبوت سے منور کرتے ہیں۔ 7 اگست بروز اتوار دن گیارہ بجے  شیخ المکرم حضرت امیر عبدالقدیر اعوان مد ظلہ العالی خصوصی خطاب فرمائیں گے اور اجتماعی دعا بھی ہو گی۔
Har buraiee kaayenaat mein zulmat ka sabab banti hai - 1